حکومت کا دہشتگرد گروپ انصار الشریعہ پر پابندی لگا نے کا فیصلہ

Ahsan Iqbal

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا ہے کہ حکومت دہشت گروپ انصار الشریعہ پر جلد پابندی لگا دے گی۔ بدھ کو میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے وزیرداخلہ نے کہاکہ ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما پر حملے کے ماسٹر مائنڈ کو گرفتار کرلیا گیا ہے اور باقی ملزموں کو بھی جلد گرفتارکرلیاجائے گا کیونکہ قانون نافذ کرنے والے ادارے ان کے پیچھے ہیں ۔ احسن اقبال نے کہاکہ یہ بڑی کامیابی ہے اور حکومت اس گروپ کا پورا نیٹ ورک توڑنے کے لئے پر عزم ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ڈائریکٹر جنرل رینجرز نے انہیں اس واقعہ سے متعلق پیشرف پر آگاہ کیا ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ ایم کیو ایم پاکستان سمیت تمام سیاسی جماعتوں کو سیاسی آزادی حاصل ہے تاہم کسی تشدد پسند گروپ یاپارٹی کو انارکی پھیلانے کی اجازت نہیں دیں گے۔ عوامی مرکز میں آگ لگنے کے واقعہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اس واقعہ کی انکوائری رپورٹ طلب کرلی گئی ہے۔ دریں اثنائ سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ کے چیئرمین سینیٹر رحمان ملک کی صدارت میں منعقد ہونےو الے اجلاس میں وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا ہے کہ امریکہ کے صدرڈونلڈ ٹرمپ کی تقریر پر چین ،روس اور ریورپین یونین نے پاکستان کی تائید کی ۔ امریکہ کے اندر بھی کثیر تعداد میں پاکستان کی قربانیوں کی حمایت موجود ہے۔ برکس میں چین نے کوئی یو ٹرن نہیں لیا ۔ نیشنل ایکشن پلان پر موثر طریقے سے عمل درآمد ترجیح ہے۔ انتہا پسندی جنم دینے والے اسباب روکنے کے لیے متبادل بیانیہ اجاگر کرنا بنیادی مقصد ہے۔ وزرائ اعلیٰ کےساتھ اجلاس منعقد کیا گیا ہے۔ تمام صوبوں کے وزرائ داخلہ کا ماہانہ اجلاس منعقد ہو کرے گا۔ وفاق المدارس کے طلبائ کے رجسٹریشن فارم پر صوبائی وزرائ اعلیٰ نے اتفاق کیا ہے۔دہشت گردی کی جنگ میں پاکستان کی دی گئی قربانیوں کی تفصیل پر مشتمل کتابچہ دنیا بھر میں پاکستان کے سفیروں کو بھجوایا جائے گا۔ چیئرمین کمیٹی رحمان ملک نے کہا کہ صدر امریکہ ڈونلڈ ٹرمپ کے بیانات کا نوٹس لیا جانا چاہیے ۔ قومی سلامتی کے اداروں کے افسران و اہلکاران اور پاکستانی شہریوں کی قربانیوں سے دنیا کو آگا ہ کیا جائے اور کہا کہ پاکستان دہشتگردی کا خود بڑا متاثرہ ملک ہے۔ پاکستان پر جھوٹے الزام لگائے جارہے ہیں۔۔ سینیٹر جاوید عباسی نے بین الاقوامی سمگلر اور منی لانڈرنگ کرنے والے غیر ملکی شہری کی پاکستانی شہریت کی دستاویزات تیار کرنے میں سفارتخانے کے عملے کے ملوث ہونے اور غیر ملکی شہری کو پاکستان لانے کا معاملہ اٹھاتے ہوئے کہا کہ سخت سے سخت کارروائی عمل میں لائی جائے ۔ جس پر ایف آئی اے حکام نے آگا ہ کیا کہ جعلسازی اور غیر قانونی کام میں ملوث سرکاری اہلکاران شامل تفتیش کرلیے گئے ہیں۔ جس پر کمیٹی نے ہدایت دی کہ جب تک تفتیش مکمل نہیں ہوتی سفیر کو واپس بلوایا جائے۔ اگلے اجلاس میں سیکرٹری وزارت خارجہ کو طلب کرلیا گیا۔ سینیٹر محمد سیف نے کہا کہ محکمانہ کارروائی کی جائے ۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ سفارتخانے کے ملازمین نے مجرمانہ غفلت کی ایف آئی اے کے ذریعے سخت کارروائی عمل میں لائی جائے ۔ ۔ سینیٹر جاوید عباسی نے ایف آئی اے کی تفتیش پر اطمینان کا اظہار کیا ۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ قومی خدمت سرانجام دینے والے افسران کو ایوارڈ دیئے جائیں۔ سوشل میڈیا پر تضحیک آمیز مواد کے بارے میں چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ عام لوگوں کے ساتھ ساتھ سیاستدانوں اور ان کے خاندانوں کو بھی ذلیل کیا جاتا ہے۔ مریم نواز ہماری بیٹی ہے ۔ ان کے بارے میں بہت غلط باتیں کی گئیں ۔ ایف آئی اے جعلی فیس بک اکاؤنٹس کا پتہ چلائے ۔ وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ ایف آئی اے کے سائبر کرائم ونگ کو مضبوط بنانے کے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں۔ سینیٹر کریم احمد خواجہ کی طرف سے خودکشی کی کوشش کرنے والے کی ایک سال کی سزا کو ختم کرنے کے بل پر بحث ہوئی۔ سینیٹر کریم احمد خواجہ نے کہا کہ خودکشی کرنے والے ذہنی مریض ہیں ۔ سزا کی بجائے علاج کرانا چاہیے ۔ سینیٹر جاوید عباسی نے کہا کہ ایسے لوگو ں کو ہمدردی کی ضرورت ہوتی ہے۔ سینیٹر اسرارللہ زہری نے کہا کہ بدعنوانی کے بعد لوگ خودکشی کیوں نہیں کرتے ۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ بل پر اعتراض نہیں شہری لحاظ سے دیکھنا ہوگا مجھے اسلامی نظریاتی کونسل حکام نے آگا ہ کیا ہے کہ خودکشی کرنے والے کا جنازہ نہیں ہوتا۔ سینیٹر شاہی سید نے کہا کہ کیا خودکش حملہ کرنے والوں کے جنازے ہوتے ہیں اور ورثائ کو مبارکبادیں بھی نہیں دی جاتیں۔ سینیٹر صالح شاہ نے کہا کہ خودکشی کرنے والے کا جنازہ پوشیدہ طریقے سے پڑھنا ہوتا ہے۔ شریعت میں ایسا نہیں کہ اس کا جنازہ پڑھا ہی نہیں جاتا ۔سینیٹر جہانزیب جمالدینی نے کہا کہ غیر متوازن نظام کی وجہ سے ڈپریشن عام ہے ۔ اس کے خاتمے کے لیے آگاہی مہم چلائی جانی چاہیے۔ سیکرٹری اسلامی نظریاتی کونسل نے کہا کہ کونسل کا چیئرمین نہ ہونے کی وجہ سے کونسل کی طرف سے رائے نہیں دے سکتے ۔ اس بارے میں نہ تو کوئی آیت اور نہ ہی کوئی حدیث موجود ہے۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ سائیکاٹرک کونسل ، لائ ڈیوژن سے رائے لینے کے علاوہ عوامی سماعت بھی کرائی جائے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.