/

سعودی طبی ماہرین کی کرونا وائرس کی آسٹرازینیکا ویکسین کے حوالے سے تحقیق

ریاض: ویب ڈیسک ::سعودی طبی ماہرین نے کرونا وائرس کی آسٹرازینیکا ویکسین کے مضر اثرات کے حوالے سے ایک تحقیقی رپورٹ میں کہا ہے کہ اس کے لگوانے سے کچھ خاص مضر اثرات (سائیڈ ایفیکٹس) مرتب نہیں ہوتے۔

تفصیلات کے مطابق سیکریٹری صحت عبداللہ عسیری نے بتایا ہے کہ سعودی اسکالرز نے آسٹرازینیکا ویکسین کے حوالے سے ایک جائزاتی رپورٹ مرتب کی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ یہ کرونا وائرس کے شدید انفیکشن سے بچاتی ہے، یہ مؤثر اور بے ضرر ہے۔

اس طبی تحقیق کے لیے سعودی اسکالرز نے 10 اپریل سے 20 مئی کے دوران ظہران کے کنگ فہد آرمی کمپلیکس میں آسٹرازینیکا ویکسین لگوانے والوں کا جائزہ لیا تھا، جس کے کئی نتائج برآمد ہوئے۔

اہم ترین نتیجہ یہ تھا کہ آسٹرازینیکا ویکسین لگوانے کے خاص سائیڈ ایفیکٹ نہیں ہوتے۔

جائزے میں شامل بعض ایسے کیسز ریکارڈ پر آئے جنھوں نے آسٹرازینیکا ویکسین لگوائی تھی، اور وہ انجیکشن لگنے والی جگہ پر درد محسوس کر رہے تھے، انھیں بخار، کپکپی، سر میں درد، پٹھوں میں تکلیف، تھکاوٹ اور خارش جیسے عارضے لاحق ہوئے۔

ایک بات یہ بھی سامنے آئی کہ خواتین کے مقابلے میں مرد ان تکالیف سے زیادہ دوچار ہوئے۔ سعودی اسکالرز نے بتایا کہ زیادہ تر تکالیف سن رسیدہ افراد کو پیش آئے، جب کہ کم سن لڑکوں کو اس قسم کی تکالیف کم ہوئیں۔

اسکالرز نے یہ نتیجہ بھی اخذ کیا کہ ویکسین کی ایک خوراک 67 فی صد تک وائرس سے بچانے میں مؤثر ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published.