/

سرپرستی ختم کرنے کیلئے برٹنی اسپیئرز کے والد نے درخواست دائر کر دی

Britney Spears American Singer
Britney Spears American Singer

لاس اینجلس جدت ویب ڈیسک:پاپ گلوکارہ برٹنی اسپیئرز کے والد جیمز اسپیئرز نے 13 برس سے گلوکارہ کی زندگی اور رقم پر حاصل سرپرستی کو ختم کرنے کی درخواست دائر کردی۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق جیمز اسپیئرز نے سرپرستی ختم کرنے کی درخواست لاس اینجلس کی اعلیٰ عدالت میں دائر کی۔

عدالت میں جمع کرائی گئی دستاویز میں کہا گیا کہ جیسا کہ جیمز اسپیئرز نے بار بار کہا ہے، وہ صرف وہی چاہتے ہیں جو ان کی بیٹی کیلئے بہتر ہو، اگر برٹنی اسپیئرز سرپرستی کو ختم کرنا چاہتی ہیں اور یقین رکھتی ہیں کہ وہ خود کو سنبھال سکتی ہیں تو جیمز اسپیئرز کا خیال ہے کہ انہیں یہ موقع ملنا چاہیے۔

جج برینڈا پینی جو اس کیس کی سماعت کررہے ہیں، ان کی جانب سے اس درخواست کی منظوری دی جائے گی۔برٹنی سپیئرز کے اٹارنی میتھیو روزنگارٹ نے ایک ای میل میں کہا کہ یہ گلوکارہ کیلئے ایک اور قانونی جیت ہے۔

خیال رہے کہ جیمز اسپیئرز، سرپرستی کی وجہ سے اپنی بیٹی اور عوام دونوں کی جانب سے تنقید کا نشانہ بن رہے تھے۔واضح رہے کہ گزشتہ ماہ اگست میں جیمز اسپیئرز نے لاس اینجلس کی کورٹ میں جمع کرائے گئے دستاویزات میں اپنی ذمہ داریوں سے سبکدوش ہونے کے لیے رضامندی ظاہر کی تھی تاہم دستاویزات میں یہ واضح نہیں کیا گیا تھا کہ وہ کب تک ذمہ داریوں سے ہٹنے کو تیار ہیں۔

برٹنی اسپیئرز نے 27 جولائی کو لاس اینجلس کی عدالت میں چوتھی مرتبہ والد کو ہٹانے کی درخواست دائر کی تھی۔جیمز اسپیئرز کے ہٹنے کے بعد گلوکارہ کے معاملات دیکھنے کے لیے کسی دوسرے فرد یا ادارے کو ’سرپرستی‘ کی ذمہ داریاں دیے جانے کا امکان ہے۔برٹنی اسپیئرز کے والد جیمی اسپیئرز 2008 سے اداکارہ کے ’سرپرست‘ ہیں اور اداکارہ گزشتہ دو سال سے والد کی مذکورہ حیثیت ختم کروانے کے لیے کوشاں ہیں۔

برٹنی اسپیئرز کے والد کو امریکی عدالت نے 2008 میں اس وقت گلوکارہ کا ’سرپرست‘ مقرر کیا تھا جب کہ اداکارہ کی ذہنی حالت ٹھیک نہیں تھی اور وہ اپنے فیصلے بھی کرنے کی اہل نہیں تھیں۔گزشتہ 13 سال سے والد ہی اداکارہ کے تمام معاملات دیکھ رہے ہیں اور برٹنی اسپیئرز والد کی اجازت کے بغیر کوئی کام نہیں کر سکتیں، یہاں تک کہ وہ کسی شو میں پرفارمنس یا کسی مرد سے تعلقات بھی اپنے والد کی مرضی کے بغیر استوار نہیں کرسکتیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.