راول ڈیم میں زہر ملائے جانے کا انکشاف ،ہزاروں من مچھلیاں ہلاک

جدت ویب ڈیسک : مچھلی نہ پکڑنے کی سزا محکمہ فشریز کے حکام کا کہنا ہےکہ ڈیم میں مچھلیاں پکڑنے اور کشتی رانی پر پابندی عائد ہے جس کی وجہ سے مافیا کو مچھلیاں پکڑنے سے روکنے پر اس نے ڈیم کے پانی میں زہر ملا دیا جس سے اب تک تین دنوں میں ہزاروں من مچھلیاں ہلاک ہوچکی ہیں۔میئر اسلام آباد اور چیرمین سی ڈی اے شیخ انصر نے گفتگو میں کہا کہ راول ڈیم کا انتظام اور کنٹرول پنجاب حکومت کے پاس ہے، ڈیم کا پانی راولپنڈی کےشہریوں کو دیا جاتا ہے جب کہ اسلام آباد کو خان پور اور سملی ڈیم سے پانی فراہم کیا جاتا ہے۔حکام کے مطابق راول ڈیم سے پینے کے لیے بھی پانی فراہم کیا جاتا ہے اس لیے پانی میں زہر ملائے جانے کے بعد پینے کا پانی بھی زہریلا ہونے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔حکام نے بتایا کہ ڈیم کا پانی شدید آلودہ ہوچکا ہے جب کہ زہر ملانے سے متعلق حتمی رپورٹ کا انتظار ہے جس کے بعد ہی بتایا جاسکے گا کہ ڈیم میں کس قسم کا زہر ملایا گیا۔راول ڈیم انتظامیہ کے مطابق ڈیم سے روزانہ 24 ملین گیلن پانی واسا کو دیا جاتا ہے اور واساکی درخواست پر ڈیم سے پانی کی سپلائی بند کی گئی ہے جب کہ راولپنڈی کو بھی عارضی طور پر پانی کی فراہمی بند کردی گئی ہے اور رپورٹ آنےکے بعد پانی کی فراہمی بحال کی جائے گئی۔انتظامیہ کا کہنا ہےکہ پانی کے نمونوں کی تحقیقات واسا کرتا ہے، پانی اورمچھلی کےنمونوں کا تجزیہ کیا جارہا ہے، ڈیم میں مچھلی کی 10سے زائد اقسام موجود ہیں جب کہ ابتدائی تحقیقات کے تحت صرف سلورمچھلی مردہ پائی گئی۔ڈیم میں مبینہ طور پر زہر ملانے کا مقدمہ محکمہ فشریز کی مدعیت میں تھانہ سیکریٹریٹ میں درج کرلیا گیا ہے تاہم اس میں کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے۔راول ڈیم کا علاقہ اسلام آباد انتظامیہ کے انڈر میں آتا ہے لیکن انتظامیہ نے واقعے سے لاتعلقی ظاہر کی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.