نااہل شریف کے بیٹے حسن نواز کی عدالت کو دھمکیاں

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک نااہل وزیر اعظم کے بیٹے حسن نواز نے برطانوی اخبار کو انٹرویو دیتے ہوئے دعویٰ کیاہے کہ برطانیہ کے شہر لندن میں ان کے پاس متعدد جائیدادیں ہیں یہ جائیدادیں کرپشن سے نہیں بلکہ جائز دولت سے خریدی گئیں ۔ انہوں نے کہا کہ ساری زندگی نہ تو انہوں نے اپنے والد نواز شریف سے ایک پائی وصول کی ہے اور نہ ساری زندگی ایک پائی انہیں ادا کی ہے ۔ نیب لندن کی جائیدادوں کو قرقی نہیں کر سکتا اور نہ کسی کو یہ جائیدادیں قرقی کرنے کی اجازت دیں گے ۔ برطانوی اخبار ’’دی ٹائم ‘‘کو حسن نواز نے اپنے انٹرویو میں کہا ہے کہ حکومت پاکستان شریف خاندان کی لندن میں جائیدادوں کی قرقی کرنے کا کوئی قانونی جواز نہیں رکھتی ۔ ابتداء میں جب انہوں نے کاروبار کیا تو صرف 2 جائیدادیں تھیں ان جائیدادوں کو برطانوی بنکوں میں گروی رکھ کر مزید کاروبار کو وسعت دی گئی اس میں نہ منی لانڈرنگ کا پیسہ استعمال ہوا ہے نہ کرپشن کا کیونکہ انہوں نے کبھی بھی اپنے والد نواز شریف سے کوئی رقم نہ وصول کی ہے اور نہ کوئی رقم ادا کی ہے ۔ برطانیہ میں جائیدادین خریدنا اور تعمیر کر کے فروخت کرنا ان کا کاروبار ہے اور ان کا یہ کاروبار برطانیہ میں رجسٹرڈ ہے اور رجسٹرڈ کمپنی کا وہ واحد مالک ہے اور وقت پر برطانیہ کو ٹیکس ادا کرتا ہوں ۔ برطانوی ماہر قانون کے حوالے سے برطانوی اخبار نے لکھا ہے کہ حکومت پاکستان برطانیہ شریف خاندان کی جائیداد اپنے قبضہ میں لینا مشکل کام ہے اور اس قسم کے مقدمہ بازی میں کئی سال لگتے ہیں تاہم برطانوی عدالتی احکامات کی روشنی میں یہ جائیدادیں حکومت پاکستان کو واپس مل سکتی ہیں ۔تاہم اس کا جواز پیش کرنے کی ذمہ داری حکومت پاکستان کے ذمے ہو گی ۔ اپنے انٹرویو مین حسن نواز نے یہ نہیں بتایا کہ کم سن عمر میں اس نے کروڑوں روپے سے کاروبار کیسے شروع کیا اور کاروبار کا ابتدائی سرمایہ کہاں سے آیا یہ وہ سوال ہے جس پر ان کے والد نواز شریف وزارت عظمیٰ سے نااہل ہوئے ہیں ۔ پاکستان کی سپریم کورٹ نے حسن نواز ‘ حسین نواز ‘ مریم نواز اور ان کے والد نواز شریف پر مقدمہ قائم کرنے کا حکم دیا ہے ۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.