کراچی ائیرپورٹ سکول سات سال سے بجلی سے محروم انتظامیہ کہاں؟جانیے

کراچی جدت ویب ڈیسک ِ: سروےآصف خان ۔ایئرپورٹ کے عقب واقع گورنمینٹ گرلز پرائمری ماڈل اسکول سات سال سے بجلی سے محروم اسکول کی عمارت انتہائی  مخدوش بچوں کے لیئے پینے کا پانی تک موجود نہیں اسکول کو کربلا بنادیاگیا ہے اسکول کی پرنسپل کی تحریری شکایت کے باوجود متعلقہ ادارے کی چشم پوشی تصیلات کے مطابق کراچی ایئرپورٹ کے عقب میں واقع سرکاری اسکول گورنیمنٹ گرلز پرائمری ماڈل اسکول بھٹائی آباد قوم کی بہین بٹیاں بغیر بجلی پانی کے تعلم حاصل کررہی ہے اسکول کے بیت الخلا استمعال کے قابل نہیں اسکول کی عمارت انتیائی مغدوش ہوچکی ہے ۔جدت سروے ٹیم جب اسکول پنچہی تو اسکول تو عین اسکول کے مین گیٹ پر کچرا موجود تھا اسکول کسی بھنسیوں کے باڑے کا منظر پش کر رہاتھا۔اسکول کی چاردیواری جگہ جگہ سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار تھی کلاس کے کمروں کا پلستر اکھڑ چکاتھا جو خدانخواستہ کسی سانحہ کا باعث بن سکتاہے کمروں میں پنھکے کے کنکشن تو موجود تھے لیکن لائٹ نہ ہونے کی وجہ سے پنکھے موجود نہیں تھے جس سے بخوبی اندازہ لگایا جاسکتاہے کسطرح سے سندھ حکومت بنت حواکی بٹیوں کو تعلم کے زیورسے روشناس کر وارہی ہے ۔اسکول کی پرنسیپل نے روزنامہ جدت کو بتایا انھوں نے متعلقہ اداروں میں متعدد بار درخوستیں دے چکے ہیں لیکن کوئی سنوائی نہیں ہوئی ہے اسکول کی عمارت انتیائی مخدوش ہوچی ہے کلاس رومز کے دروازے ٹوٹ چکے ہے اسکول کے عملے کے رکن علی نے بتایا اسکول میں پینے کے پانی کے لیئے بنائی گئی ٹینکی سے ٹونٹیاں غائب ہے ٹینکی انتیائی مخداش ہوچکی ہے بیت الخلا میں گندگی اور غلاظت کے وجہ سے شدید تعفن ہے جہاں کھڑاہونا تک محال ہے علاقہ مکینوں نے روزنامہ جدت کو بتایا بھٹائی آباد بھی کراچی کا حصہ ہے لیکن بھٹائی آباد کے ساتھ سوتیلی ماں والا سلوک کیاجارہاہے بٹھائی آباد کی آبادی اکثریت سندھی بولنے والے اور پشتو بولنے والوں پر مشتمل ہے بٹھائی آباد کی عوام کو تعلم سے محروم کیاجارہاہے اسکول کھنڈر بن چکاہے علاقہ مکینوں نے وزیراعلی سندھ وزیر تعلم سے درخواست کی کہ بٹھائی آبادکی عوام بھی تعیلم کے زیور سے زیور روشناس کیاجائیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.