ماجو میں نئے سیمسٹر کے آغاز پر اوپن ہاوس سیشن کا انعقاد

Mohammad Ali Jinnah University

کراچی جدت ویب ڈیسک ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے ڈائیریکٹر سندھ ریجن جاوید میمن نے کہا ہے کہ ایچ ای سی پاکستان کے ہر ضلع میں ایک یونیورسٹی قائم کرے گی تاکہ ملک میں اعلیٰ تعلیم کو فروغ ہوکیونکہ تعلیم ہی وہ واحدشعبہ ہے جو ملک کی ترقی کی ضمانت فراہم کر سکتا ہے۔یہ بات انہوں نے گزشتہ روز محمد علی جناح یونیورسٹی کراچی میں پیر کے روز سے شروع ہونے والے نئے سیمیسٹر میں داخلہ لینے والے طلبہ اور انکے والدین کی رہنمائی کے لئے منعقد کئے جانے والے اوپن ہاوس سیشن میں بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہی۔تقریب سے ماجو کے صدر پروفیسر ڈاکٹر زبیر شیخ،ڈین فیکلٹی آف لائف سائینسز پروفیسر ڈاکٹر کامران عظیم، ایسوسی ایٹ ڈین،کمپیوٹر اینڈ انجینئرنگ ڈاکٹر عاصم امداد،ایسوسی ایٹ ڈین بزنس ایڈمنسٹریشن ڈاکٹر شجاعت مبارک اور ڈائیریکٹر طلبہ امور احمر عمر نے بھی خطاب کیا۔تقریب میں یونیورسٹی کے شعبہ جاتی سربراہان،اساتذہ،طلبہ اور ان کے والدین نے ایک بڑی تعداد میں شرکت کی۔جاوید میمن نے کہاکہ محمد علی جناح یونیورسٹی کراچی ملک میں اعلیٰ تعلیم کے فروغ کے لئے قابل تعریف کام کررہی اور اسے ملک کے ممتاز ماہر تعلیم ڈاکٹر عطا الرحمان کے قریبی ساتھی ڈاکٹر کامران عظیم ڈاکٹر زبیر شیخ جیسی قد آور شخصیات کی خدمات حاصل ہیں۔ انہوں نے کہا ا کہ پندہ سال قبل ایچ ای سی کے قیام کے وقت پاکستان میں پچاس کے قریب یونیورسٹیوں میں چار لاکھ کے قریب طلبہ زیر تعلیم تھے جبکہ اس وقت ملک کی 80 سے زائید یونیورسٹیوں میں 12 لاکھ سے زائید طلبہ تعلیم حاصل کر رہے ہیں ، اس کے علاوہ محلقہ انسٹیٹیوٹ اور دیگر تعلیمی اداروں میں بھی دس لاکھ طلبہ زیر تعلیم ہیں۔انہوں نے کہا کہ امریکہ کی ترقی کا راز یہ ہے کہ انہوں نے کسی اور شعبہ کے بجائے نالج بیس اکنامی کے لئے اپنی قوم کو تیار کیا اس لئے ہمارے لئے بھی یہ بہت ضروری ہے کہ ہم نالج بیس اکنامی کی جانب اپنے قدم بڑھائیں۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے محمد علی جناح یونیورسٹی کراچی کے صدر پروفیسر ڈاکٹر زبیر شیخ نے نوجوان طلبہ پر زور دیا کہ اپنے وطن کی مٹی سے محبت کا جذبہ ان کے لئے سب سے زیادہ اہم ہونا چاہیے اور اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد بیرون ملک جاکر اغیار کے لئے کام کرنے کے بجائے اپنے ملک و قوم کی خدمت کرنے کو ترجیح دینی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ماجو میں جدید طرز تعلیم پر سب سے زیادہ توجہ دی جارہی ہے جس کے لئے نئی ٹیکنالوجی سے بھر پور استفادہ کرتے ہوئے فرانسک،روبوٹک،کمپیوٹنگ اور دیگر لیب قائم کی جارہی ہیں۔انہوں نے بتایا کہ کمپیوٹر سائینس کی تعلیم کے فروغ کے دنیا کی بہترین یونیورسٹیوں اور ریسرچ ڈیٹا بیس جرنلز سے پرن کنیکٹیوٹی کے ذریعے منسلک ہونے کے بعد ماجو ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے 155 میگا بائیٹس انٹرنیٹ سسٹم کے ساتھ منسلک ہونے جارہی ہے جو اس سہولت سے استفادہ کرنے والی کراچی کی دوسری یونیورسٹی ہوجائے گی۔انہوں نے بتایا کہ اس سالالیکٹریکل و کمپیوٹر انجینئرنگ اور بائیو سائیسنسز کے نئے ڈگری پروگرام شروع کرنے کے بعد ہم اگلے سال سے ایم ایس بائیو ٹیکنالوجی،ایم ایس انفارمیٹک ٹیکنالوجی اور فارمیسی کے ڈگری پروگرام شروع کرنے کی تیاری کررہے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ بزنس ایڈمنسٹریشن کی تعلیم کے شعبہ میں ہم بہت جلد سوشل سائینسز کی ایک فیکلٹی شروع کرنے جارہے ہیںجبکہ طلبہ کو انکی تعلیم مکمل کرنے کے بعد اپنا کاروبار کرنے کی جانب راغب کرنے کے لئے یونیورسٹی کی جانب سے بزنس انکو بیٹر کی فراہمی بھی شروع کی جاچکی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.