بنگلہ دیش کا روہنگیا مسلمانوں سے متعلق اہم بیان

Myanmar

میانمارجدت ویب ڈیسک شیخ حسینہ  واجد نے روہنگیا مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے ’مظالم‘ پر میانمار حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے جس  میں گزشتہچند ہفتوں کے دوران ہزاروں روہنگیا مسلمان سرحد پار کرکے بنگلہ دیش میں داخل ہونے پر مجبور ہوئے ہیں۔امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹ کے مطابق بنگلہ دیشی وزیراعظم نے بدھ متوں کے اکثریتی  علاقوں سےسے روہنگیا مسلمانوں کی واپسی پر زور دیاگیا،بنگلہ دیشی پارلیمنٹ نے بھی گزشتہ روز ایک تحریک منظور کی تھی جس میں اقوام متحدہ اور دیگر ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ روہنگیا مسلمانوں کے تحفظ اور شہریت کے لیے میانمار پر دباؤ بڑھائیں۔شیخ حسینہ کا کہنا تھا کہ ‘میانمار بنگلہ دیش آنے والے، اور بنگلہ دیش میں پہلے سے موجود روہنگیا مسلمانوں کو واپس لے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہم میانمار کو روہنگیا مسلمانوں کی بحالی میں تعاون فراہم کریں گے۔انہوں نے روہنگیا مسلمانوں پر تشدد پر میانمار انتظامیہ کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ یہ بات سمجھ سے بالا تر ہے کہ میانمار حکومت ایک مخصوص کمیونٹی پر اتنے مظالم کیوں ڈھارہی ہےجبکہ ان کا ملک مختلف کمیونٹی کے افراد پر مشتمل ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.