اپنے ہی گراتے ہیں نشیمن پربجلیاں ،تیرہ افراد لسی پی کے مرگئے ،جانیے

جدت ویب ڈیسک :میڈیا رپورٹس کے مطابق 2 روز قبل مظفرگڑھ میں علی پور کے علاقے دولت پور میں زہریلی لسی پینے کے باعث 13 افراد کی موت واقع ہوگئی تھی اور واقعہ ایک معمہ بن گیا تھا تاہم پولیس نے اس پراسرار واقعے کی تحقیقات کرتے ہوئے خاندان کے 13 افراد کی موت کا ذمہ دار بہو آسیہ کو قرار دے دیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمہ آسیہ نے پسند کی شادی نہ ہونے پر زہر ملی لسی سسرالیوں کو پلا دی ، زہرکا اثر اس قدر شدید تھا کہ 2 روز میں 13 افراد کی موت واقع ہوچکی ہے اور تاحال 14 افراد اسپتال میں زیر علاج ہیں۔پولیس کے مطابق 13 افراد کی ہلاکت کے بعد پولیس نے خاندان کے زندہ بچ جانے والے افراد سے تفتیش شروع کی اور اسی سلسلے میں واقعے میں ہلاک ہوجانے والے امجد کی بیوی کو زیر حراست لیا گیا اور جب تفتیش شروع کی گئی تو انکشاف ہوا کہ سسرالیوں کو زہرملی لسی پلانے میں گھر کی بہو کا ہی ہاتھ ہے۔پولیس کے مطابق 8 ماہ قبل آسیہ نامی خاتون کی شادی اس کی مرضی کے خلاف امجد سے ہوئی تھی اور وہ اپنے آشنا سے شادی کرنا چاہتی تھی، آسیہ نے شوہر کو راستے سے ہٹانے کے لے دودھ میں زہر ملا کردیا لیکن اس کے شوہر نے دودھ پینے سے انکارکردیا اورامجد کی ماں نے اسی دودھ میں اور دودھ ملا کر دہی جمالی، اگلی صبح اسی دہی سے زہریلی لسی بنی جسے پینے سے 28 افراد متاثر ہوئے جن میں 13 دم توڑ گئےآسیہ اور اسکے ساتھیوں کو پولیس نے پکڑ لیا

Leave a Reply

Your email address will not be published.