شاہ لطیف ٹریفک سیکشن رشوت کا گڑھ بن گیا

ملیر جدت ویب ڈیسک شاہ لطیف ٹریفک سیکشن رشوت کا گڑھ بن گیا، ٹریفک پولیس اہلکاروں نے رشوت خوری کا کھلے عام بازار لگا رکھا ہے، اسٹیشن آفیسر نے قومی شاہراہ پر گیراج ،گودام اور ہوٹل مالکان سے سڑک پر گاڑیاں کھڑی کرنے کے عیوض ہفتہ مقرر کررکھا ہے، ٹریفک چوکی پر تعینات 20سے زائد اہلکاروں سے 25ہزار سے30ہزار یومیہ رشوت لی جاتی ہے، اس ضمن میں ٹریفک پولیس اور دیگر ذرائع سے حاصل کردہ معلومات کے مطابق ٹھٹھہ سے کراچی آنے جانے والی مرکز ی شاہراہ بھینس کالونی موڑ پر قائم شاہ لطیف ٹریفک اسٹیشن کے اپنی روح بشیر گوندل نے ٹریفک چوکی پر تعینات 25سے زائد افسران اور سپاہیوں سے فی کس ہزار سے 2ہزار ریٹ مقرر کر رکھے ہیں، جس سے اسٹیشن افسر بشیر گوندل یومیہ 25ہزار سے 30ہزار وصول کرتا ہے جبکہ ایس او ٹریفک پولیس اپنی حدود میں قائم قومی شاہراہ پر موٹر مکینک گیراج ،گودام اور ہوٹل مالکان سے غیر قانونی پارکنگ کے عیوض بھاری رشوت کا ہفتہ مقرر کر رکھا ہے،سڑک کے بیچ میں گاڑیاں اور پتھاریں کھڑی کرنے کی وجہ سے گھنٹو ں ٹریفک جام رہنا اور حادثات ہونا معمول بن گیا ہے، جبکہ ٹریفک چوکی پر تعینات ٹریفک پولیس اہلکار اور افسران ایس او شاہ لطیف چوکی کوروزانہ کی بنیادپر رشوت دینے کی وجہ سے دن دھاڑے اور رات دیر تک دید ہ دلیری سے قومی شاہراہ پر چلنے والی مال بردار گاڑیوں ،موٹر سائیکل سواروں ،مویشی بردار گاڑیوں، سبزی و فروٹ بردار گاڑیوں، دودھ اور مچھی بردار گاڑیوں کو ناجائز تنگ کرکے ڈرائیوروں سے مختلف حیلوں بہانوں سے زبردستی رشوت وصولی میں مصروف رہتے ہیں، ناجائز چالان اور رشوت طلب کرنے کی وجہ سے ٹرانسپورٹروں سے جھگڑے روز کا معمول بنے ہوئے ہیں، ٹرانسپورٹروں اور علاقہ مکینوں نے اے آئی جی ٹریفک پولیس مشتاق مہر سے مطالبہ کیا ہے کہ شاہ لطیف ٹریفک چوکی کے کرپٹ افسروں اور اہلکاروں کے خلاف سخت کاروائی کی جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.