سندھ ہائیکورٹ : باوانی کالج فوری طور پر کھولنے کا حکم

کراچی جدت ویب ڈیسک سندھ ہائیکورٹ نے عائشہ باوانی کالج کو سیل کرنے کا فیصلہ معطل کرتے ہوئے کالج فوری طور پر کھولنے کاحکم دے دیا۔ جمعے کے روز ہونے والی سماعت کے موقع پرکراچی کی مقامی عدالت نے عائشہ باوانی کالج کی ملکیت کا فیصلہ باوانی فیملی کے حق میں سنایا تھا اور عدالتی فیصلے پر عمل درآمد کرتے ہوئے پولیس نے کالج سیل کردیا تھا۔محکمہ تعلیم سندھ نے کالج کو سیل کیے جانے کے معاملے پر ہائیکورٹ سے رجوع کیا اور عدالت میں سماعت کے موقع پر اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے موقف اپنایا کہ کالج سیل ہونے پرطلبہ سڑک پرتعلیم حاصل کررہے ہیں جس سے زیرتعلیم طلبہ اور ان کے والدین میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے۔سندھ ہائیکورٹ نے موقف سننے کے بعد ماتحت عدالت کا فیصلہ معطل کرتے ہوئے کالج کو فوری طور پر کھولنے کا حکم جاری کردیا جب کہ فریقین کو 23ستمبر کے لیے نوٹس جاری کرتے ہوئے کیس کی مزید سماعت ملتوی کردی۔دوسری جانب وزیر تعلیم جام مہتاب ڈہر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ عائشہ باوانی کالج میں تدریسی عمل معمول کے مطابق جاری رہے گا، چند افسران کی وجہ سے محکمہ تعلیم کیس ہارا، محکمہ تعلیم کے جن افسران نےکیس کی پیروی میں غفلت کی ان کیخلاف کارروائی ہوگی،۔واضح رہے کہ عائشہ باوانی کالج پرعائشہ باوانی ٹرسٹ کی جانب سے عدالت میں ملکیت کادعوی دائرکیاگیاتھا۔عائشہ باوانی کالج میں 2ہزارسے زائد طلبا زیر تعلیم ہیں،کراچی میں عدالت کے حکم پرعائشہ باوانی کالجکرائے کی عدم ادائیگی پرسیل کیاگیا تھا،سول جج رینٹ کنٹرولرنے بیلف کوعمارت سیل کرنے کاحکم دیاتھا۔جبکہ اس سے قبل سول جج جنوبی نے 2011ئ میں 50ہزارروپے کرایہ ادائیگی کاحکم دیاتھا،کرایہ سیکریٹری تعلیم کوآرڈینیٹرافسرڈسٹرکٹ گورنمنٹ کوجمع کرایاجاتاتھا،کالج پرکرایہ کی مدمیں واجب الادارقم 85لاکھ روپے تک پہنچ چکی تھی ،عدالت نے مذکورہ عمارت کومقدمے سے منسلک کیا،عائشہ احمدابراہیم ،باوانی ٹرسٹ کی جانب سے عدالت سے رجوع کیااورملکیت کادعوی دائرکیاگیاتھاکالج پروفیسرکاکہناہے کہ محکمہ تعلیم کی عدم دلچسپی کے باعث اپیل مستردہوگئی تھی ۔عدالتی فیصلے کیخلاف دوبارہ اپیل سپریم کورٹ میں دائرکردی گئی ہے اپیل پرسماعت 18ستمبرکوہوگی ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.