حکومت ملک میں خانہ جنگی چاہتی ہے :اپو زیشن

اسلام آباد جدت ویب ڈیسک اپو زیشن جما عتو ں کے رہنما و ں نے کہا ہے کہ وزیر اعظم سے استعفے کا مطالبہ صرف ایک جماعت کا نہیں بلکہ تمام اپوزیشن جماعتیں وزیر اعظم کے استعفے پر متفق ہیں ،ملک و قوم کے علاوہ جمہوریت کے بہترین مفاد میں بھی یہی ہے کہ وزیر اعظم فوری طور پر مستعفی ہوجائیں،امید ہے کہ ملک و قوم کی سلامتی اور بقا کیلئے عدالت ایسا فیصلہ دے گی جو بہترین ہوگا،جے آئی ٹی رپورٹ کے ہر صفحے پر کرپشن کا ذکر موجود ہے لیکن حکومت ملک میں خانہ جنگی چاہتی ہے، عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ سے اسی ہفتے ثبوت اور تابوت ایک ساتھ نکلیں گے ، پاناما کیس کی سماعت کے موقع پر سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جے ا?ئی ٹی کو برا بھلا کہنے والے ا?ج سپریم کورٹ کو برا بھلا کہہ رہے ہیں ، یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ ان لوگوں کو ایسے مشورے کون دے رہا ہے۔ شیخ رشید احمد نے کہا کہ مسلم لیگ ن ملک کو نقصان پہنچانے کی کوشش کر رہی ہے۔ ایسی اطلاعات بھی موصول ہو رہی ہیں کہ ابھی تک جے آئی ٹی رپورٹ پر اعتراضات جمع نہیں کرائے گئے ،پاکستان تحریک انصاف کے سینئر وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے کہا کہ آج کا دن تاریخی دن ہے ، آج پوری قوم کی نظریں سپریم کورٹ پر لگی ہوئی ہیں ، سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو میں شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاناما کیس کا مستقبل اس کیس سے جڑا ہے ، آج سپریم کورٹ جو فیصلہ دے گی وہ فیصلہ اس قوم کی تاریخ کا تعین کرے گا ، شاہ محمود قریشی نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ ایسا نہیں کہ وزیر اعظم سے استعفے کا مطالبہ صرف ایک جماعت کا ہے بلکہ تمام اپوزیشن جماعتیں وزیر اعظم کے استعفے پر متفق ہیں ، اور اس وقت ملک اور قوم کے مستقبل کا دارومدار اس عدالت کے فیصلے پر ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج سپریم کورٹ جو فیصلہ دے گی وہ ملکی تاریخ کا تعین کرے گا۔ اس وقت صورتحال یہ ہے کہ تمام اپوزیشن جماعتیں وزیر اعظم سے استعفیٰ مانگ رہی ہیں اور ملک و قوم کے علاوہ جمہوریت کے بہترین مفاد میں بھی یہی ہے کہ وزیر اعظم فوری طور پر مستعفی ہوجائیں۔پاکستان مسلم لیگ ق کے سربراہ چودھری جاعت حسین نے سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کے دوران کہا کہ خدا کے بعد ہمیں سپریم کورٹ کا فیصلہ قبول ہوگا ، انہوں نے کہا کہ خدا کے بعد ہمیں ملک کی اعلیٰ عدلیہ کا فیصلہ بھی قبول کرنا ہوگا اور امید ہے کہ ملک و قوم کی سلامتی اور بقا کیلئے عدالت ایسا فیصلہ دے گی جو بہترین ہوگا ، انہوں نے کہا کہ اس وقت حالات کا تقاضا یہی ہے کہ وزیر اعظم فوری طور پر اپنے عہدے سے مستعفی ہوجائیں۔ شجاعت حسین نے کہا کہ آج کا فیصلہ تاریخی ہوگا اور اسے صدیوں یاد رکھا جائے گا۔ ہمیں عدالت پر یقین ہے کہ وہ ایسا فیصلہ دے گی جو ملک و قوم کے مفاد میں بہترین ہوگا۔ اس سلسلے میں ہم ہر محب وطن شہری کو اپنے ساتھ ملائیں گے کہ وہ اس جدوجہد میں ہمارا ساتھ دے۔امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا کہ جے آئی ٹی رپورٹ کے ہر صفحے پر کرپشن کا ذکر موجود ہے ، سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی نے 60 دنوں میں بہترین کام کیا اور تمام تر حقائق سامنے لانے میں اہم کردار ادا کیا ، انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ سب سے پہلے نواز شریف اور ان کے خاندان کا احتساب کیا جائے اور اس کے بعد ان لوگوں کا جنہوں نے اس قوم کو مشکل حالات میں ڈالا ہے۔پاکستان تحریک انصاف کے رہنما فواد چودھری نے کہا کہ پاکستان میں اس وقت سیاسی بحران کی کیفیت طاری ہے ، سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کے دوران انہوں نے کہا کہ جے آئی ٹٰی رپورٹ نے ثابت کر دیا کہ وزیر اعظم کرپٹ ہیں ، اب انہیں تاخیر کی بجائے فوری مستعفی ہوجانا چاہیئے۔ میڈیا کے ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم کا مزید کرسی پر رہنا ملک کیلئے خطرے کا باعث ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ وزیر اعظم اب خود استعفیٰ نہیں دیں گے ان سے استعفیٰ لینا پڑے گا۔ ایم کیو ایم کے سربراہ فاروق ستار کا کہنا تھا کہ انہیں اس بات کا یقین ہے کہ یہ کیس اپنے منطقی انجام تک پہنچے گا ، سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جے ا?ئی ٹی رپورٹ کے بعد وزیر اعظم کے پاس کوئی اخلاقی جواز نہیں بچا کہ وہ عہدے پر فائز رہیں۔فاروق ستار نے کہا کہ اس وقت ہماری کوشش ہونی چاہیئے کہ ملک کو بحرانوں سے محفوظ رکھا جا سکے اور کوشش کرنی چاہیئے کہ ملک میں کوئی سیاسی بحران نہیں ہونا چاہیئے جس سے انتشار پیدا ہو ، پی ٹی آئی کے رہنما نعیم الحق نے کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ پاکستان کی ا?نے والی نسلوں کے مستقبل کا تعین کرے گا ، ان کا کہنا تھا کہ جس شخص نے اپنے عہدے سے غداری کی وہ عہدے پر رہنے کا حقدار نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں سپریم کورٹ پر مکمل اعتماد ہے اور سپریم کورٹ جو بھی فیصلہ دے گی ہم اسے قبول کریں گے۔ پاکستان تحریک انصاف کے رہنما بابر اعوان نے کہا کہ ہم حکومت کو یہ باور کروا دینا چاہتے ہیں کہ یہ آزاد عدلیہ ہے ، اگر حکومت نے عدلیہ پر حملہ آور ہونے کی کوشش کی تو انہیں معلوم ہوجائے گا کہ یہ چنے لوہے کے ہیں جنہیں چبانے کی کوشش کامیاب نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ دو ججز وزیر اعظم کو نااہل قرار دے چکے ہیں اور اگر تیسرے نے بھی ان کو نااہل قرار دے دیا۔ اس کے علاوہ جے ا?ئی ٹٰی نے اپنے 9 صفحات کی رپورٹ میں شہباز شریف کے خلاف ثبوت پیش کئے ہیں اور ان ثبوتوں کی روشنی میں شہباز شریف کو کسی بھی وقت نااہل قرار دیا جاسکتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.