دُنیا کا تیز ترین انسان ، کھیل کی دُنیا چھوڑ گیا

جدت ویب ڈیسک اپنی آخری ریس کے بعد گفتگو میں یوسین بولٹ کا کہنا تھا کہ جسٹن گیٹلن اس ریس میں کامیابی کے حقدار تھے،لندن کے اولمپکس سٹیڈیم میں ورلڈ اتھلیٹکس چیمپئن شپ میں 100 میٹر ریس میں دنیا کے تیز ترین انسان یوسین بولٹ تیسرے نمبر پر رہے، امریکا کے جسٹن گیٹلن نے ورلڈ چیمپئن شپ میں کامیابی حاصل کرکے اتھلیٹکس کی دنیا پر یوسین بولٹ کی نو سالہ حکمرانی کا خاتمہ کردیا۔ دنیا کے تیز ترین انسان یوسین بولٹ اپنی آخری ریس میں ناکامی کے ساتھ ہمیشہ ہمیشہ کے لئے اتھلیٹیکس کی دنیا کو خیر باد کہہ گئے، یوسین 2008 سے مسلسل 9 سال تک اتھلیٹکس کی دنیا پر چھائے رہے۔یوسین بولٹ 16 اگست 2009 کو 9 اعشاریہ 58 سکینڈز میں سو میٹر کا فاصلہ طے کر کے ورلڈ ریکارڈ قائم کرتے ہوئے دنیا کے تیز ترین انسان بن گئے۔اکیس اگست 1996 کو جمیکا میں پیدا ہونے والے یوسین بولٹ نے 100 اور 200 میٹر میں عالمی اور اولمپک چیمپئن کے اعزازات اپنے نام کئے۔ انہوں نے 2008، 2012 اور 2016 میں مسلسل تین مرتبہ سو میٹر میں اولمپکس میٖڈل اپنے نام کئے۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.